عجیب اپنی یہ زندگی ہے

عجیب اپنی یہ زندگی ہے
سمیٹو جتنا بکھر رہی ہے

ہم ایک پل کو بھی جی نہ پائے
یہ لمحہ لمحہ گزر رہی ہے

عجیب اپنی یہ زندگی ہے
محبتوں کو سمجھ نہ پائے

حسین رشتے نہیں نبھائے
ہیں خواہشوں کے ہی پیچھے بھاگے

حسرتوں کو گلے لگائے
یہ آج آنکھوں میں جو نمی ہے

یہ اپنے خوابوں کی بے بسی ہے
عجیب اپنی یہ زندگی ہے

Advertisements

~ by UTS on May 21, 2010.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: