سوچ کے پھیلے صحراؤں میں

سوچ کے پھیلے صحراؤں میں
آگ سے دن اور برف سی راتیں
کاٹ کے بھی جب ہاتھ نہ آئیں
لفظ بھی آہو لگتے ہیں

جب دل درد کے ویرانوں میں
ریزہ ریزہ چن کر لائے
اُن سے کوئی یاد جگمگائے
لفظ بھی آنسو لگتے ہیں

جب میرے کھوئے خوابوں کو
میری کویتا ڈھونڈ کے لائے
گیت بنائے اور تُو گائے
لفظ بھی جادو لگتے ہیں

احمد فراز

Advertisements

~ by UTS on June 21, 2010.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: