میں کھلی ہوئی اک سچائی مجھے جاننے والے جانتے ھیں

کچھ عشق تھا کچھ مجبوری تھی سو میں نے جیون وار دیا – عبید اللہ علیم

کچھ عشق تھا کچھ مجبوری تھی سو میں نے جیون وار دیا

میں کیسا زندہ آدمی تھا اک شخص نے مجھ کو مار دیا

اک سبز شاخ گلاب کی تھا اک دنیا اپنے خواب کی تھاوہ

ایک بہار جو آئی نہیں اس کے لیے سب کچھ ہار دیا

یہ سجا سجایا گھر ساتھی مری ذات نہیں‌مرا حال نہیں

اے کاش کبھی تم جان سکو جو اس سکھ نے آزار دیا

میں کھلی ہوئی اک سچائی مجھے جاننے والے جانتے ھیں

میں نے کن لوگوں سے نفرت کی اور کن لوگوں کو پیار دیا

وہ عشق بہت مشکل تھا مگر آسان نہ تھا یوں جینا

اس عشق نے زندہ رھنے کا مجھے ظرف دیا پندار دیا

میں‌روتا ھوں اور آسمان سے تارے ٹوٹتے دیکھتا ھوں

ان لوگون پر جن لوگوں نے مرے لوگوں کو آزار دیا

وہ یار ھوں یا محبوب مرے یا کبھی کبھی ملنے والے

اک لذت سے کے ملنے میں وہ زخم دیا یا پیار دیا

مرے بچوں کو اللہ رکھے ان تازہ ہوا کے جھونکوں نے

میں‌خشک پیڑ خزاں کا تھا مجھے کیسا برگ وبار دیا

Advertisements

~ by UTS on September 17, 2010.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: