تھک گیا زندگی کی راہوں میں

تھک گیا زندگی کی راہوں میں
جا کے رہتا ہوں بیٹھ قبروں میں

ہے یہ موت و حیات کا برزخ
ہم نہ زندوں میں اور نہ مُردوں میں

مرنے والا بھی مرثیہ خواب بھی
اڑ گئے سب کے سب ہواؤں میں

چاند سورج یہاں کے دیکھ لئے
یہ بھی ہیں ڈوبتے خداؤں میں

کششِ ثقل کھینچتی ہے کوئی
روح بولے شکستہ لہجوں میں

بیٹھ کر موت کے پروں پہ کوئی
ہوا معدوم کائناتوں میں

رفیق اظہر-

Advertisements

~ by UTS on March 26, 2011.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: